روسی فوج کے جہاز کا حا د ثہ پیر کو روس کی قومی سطح پر سوگ

روسی فوج کے جہاز کا حا د ثہ پیر کو روس کی  قومی سطح پر سوگ

روس کے شہر سوچی کے ساحل کے قریب گر گر تباہ ہونے والے روسی فوج کے بحیرۂ اسود میں طیارے کے ملبے اور ممکنہ طور ہر ہلاک ہونے والوں کی لاشوں کی تلاش کا کام بڑے پیمانے جاری ہے۔اس طیارے میں 92 افراد سوار تھے۔سوچی کے ساحل کے قریب جاری اس آپریشن میں 109 غوطہ خور، بحری جہاز، ہوائی جہاز اور ہیلی کاپٹر حصہ لے رہے ہیں۔جبکہ سرچ آپریشن میں 3000 افراد شریک ہیں۔طیارے پر عملے کے ارکان، فوجی اہلکار، ایک فوجی میوزک بینڈ اور صحافی سوار تھے۔اتوار کو پیش آنے والے اس حادثے میں تمام افراد ہلاک ہوچکے ہیں جبکہ پیر کو روس میں قومی سطح پر سوگ منایا جا رہا ہے۔ وزارت دفاع کے ترجمان میجر جنرل اگور کونشنکوف کا کہنا تھا کہ طیارے کے ملبے کی تلاش کے لیے سرچ ٹیمیں طاقتور سپاٹ لائٹس کا استعمال کر رہی ہیں اوراندھیرا ہونے کے باوجود جائے وقوعہ پر تلاش کا کام تسلسل سے جاری ہے۔اس سے قبل حکام کا کہنا تھا کہ اس کی توجہ ساحل کے قریب ساڑھے دس مربع کلومیٹر کا علاقہ ہے۔وزارت دفاع کا کہنا ہے کہ انھیں ساحل سے ڈیڑھ کلومیٹر کے فاصلے پر جہاز کے ملبے کے کچھ ٹکڑے ملے ہیں جبکہ اب تک 11 لاشیں برآمد کی گئی ہیں۔مقامی وقت کے مطابق صبح پانچ بج کر 25 منٹ پر سوچی سے اڑان بھرنے کے دو منٹ بعد طیارے کا رابطہ ریڈار سے منقطع ہو گیا تھا۔طیارہ شام کے شہر لاذقیہ جا رہا تھا۔ یہ جہاز ماسکو سے اڑا تھا اور سوچی کے ایڈلر ہوائی اڈے پر ایندھن بھرنے کے لیے رکا تھا۔روسی وزارت دفاع نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ‘وزارت کو ٹی یو 154 جہاز کے ٹکڑے بحیرۂ اسود کے ساحلی شہر سوچی سے ڈیڑھ کلومیٹر دور سمندر میں 50 سے 70 میٹر گہرائی سے ملے ہیں۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*