پھیپھڑے کی طرح عمل کرکے ایندھن بنانے والا آلہ

پھیپھڑے کی طرح عمل کرکے ایندھن بنانے والا آلہ

اسٹینفورڈ: ماہرین نے ہائیڈروجن ایندھن بنانے والا ایک آلہ بنایا ہے جوعین ہمارے پھیپھڑوں کی طرح کام کرتا ہے۔
اسٹینفرڈ یونیورسٹی کے سائنسداں وائی کوئی اوران کے ساتھیوں نے پانی کو دو حصوں میں تقسیم کرکے ہائیڈروجن ایندھن بنانے والا ایک آلہ تیارکیا ہے جو عین انسانی پھیپھڑوں کے اصول پر کام کرتا ہے۔انسانی پھیپھڑوں میں باریک جھلی کے ذریعے گیسیں ایک سے دوسری جگہ جاتی ہیں۔ اس عمل میں آکسیجن نکل کر خون میں شامل ہوجاتی ہے یوں جسم کے قریباً تمام حصوں تک پہنچتی ہے۔ ماہرین نے خاص طرح کے الیکٹرو کیٹیلِسٹس (برق عمل انگیز) استعمال کرتے ہوئے پانی کا کیمیائی تعامل (ری ایکشن) بڑھایا ہے جو پانی کو توڑتے ہوئے قدرے تیزی سے پانی سے ہائیڈروجن بناتا ہے۔ اس سے ہائیڈروجن سواریوں اور اسے استعمال کرکے اسمارٹ فون سے لے کر گھروں تک کو روشن رکھا جاسکتا ہے۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*