اسلام آباد ہائی کورٹ نے پاکستان تحریک انصاف کو ڈیمو کریسی پارک میں دھرنا دینے کی اجازت دے دی

اسلام آباد ہائی کورٹ نے پاکستان تحریک انصاف کو ڈیمو کریسی پارک میں دھرنا دینے کی اجازت دے دی

اسلام آباد ہائی کورٹ نے پاکستان تحریک انصاف کو ڈیمو کریسی پارک میں دھرنا دینے کی اجازت دے دی ۔اسلام آباد ہائیکورٹ میں پی ٹی آئی دھرنے کے خلاف درخواستوں کی سماعت ہوئی ۔ سماعت کے دوران جسٹس شوکت عزیز صدیقی نے حکم دیا کہ ڈیموکریسی پارک کے علاوہ کہیں دھرنا نہیں ہو گا جبکہ انتظامیہ یقین دہانی کروائے کہ شہریوں کے حقوق متاثر نہیں ہوں گے۔پی ٹی آئی کے وکیل نعیم بخاری کا عدالت میں کہنا تھا کہ عمران خان کئی دن سے پولیس کے محاصرے میں ہیں ، جس پر عدالت نے استفسار کیا کہ کیا آپ ڈویمو کریسی پارک میں دھرنا دیں گے؟ وکیل کا کہنا تھا کہ ہمارا احتجاج ڈیموکریسی پارک سے شروع ہو گا ۔ جسٹس شوکت نے کہا کہ اگر میڈیا ٹرائل ججز کا کرنا ہے تو میرے گھرسےشروع کریں ۔ کیا خان صاحب قانون سے بالا ہیں؟عمران خان اگر محاصرے میں ہیں تو آئی جی انہیں عدالت لیکر آئیں۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف یا عمران خان سے محبت ہے نا نفرت، سیاسی رہنماؤں کا احترام کرتا ہوں، میرے خاندان کو سب جانتے ہیں مجھے پرواہ نہیں۔سماعت کے دوران درخواست گزار شہری کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ پی ٹی آئی رہنماؤں کی گاڑیوں سے اسلحہ مل رہا ہے ، پی ٹی آئی رہنما انتشار پھیلا رہے ہیں ،جسٹس شوکت نے ریمارکس دیئے کہ حکومت کو قانونی کارروائی سے نہیں روکا ۔ وکیل کا کہنا تھا کہ تکلیف یہ ہے کہ بنی گالا میں بوتل اور لڑکی نہیں جا سکتی، جس پر عدالت نے اظہار برہمی کرتے ہوئے کہا کہ مجھے پتہ ہے یہاں سرکاری گاڑیوں میں بھی بوتلیں جاتی ہیں ، ایمبیسی سے لیکر گھروں تک کس کی گاڑی میں بوتلیں جاتی ہیں سب پتہ ہے ۔ اس موقع پی ٹی آئی نے عدالت پر عدم اعتماد کا اظہار کیا تاہم عدالت نے موقف مسترد کرتے ہوئے تمام درخواستیں نمٹا دیں اور پی ٹی آئی کو ہدایت کی کہ پریڈ گرائونڈ کے سوا کسی اور مقام پر احتجاج نہ کریں ۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*