عیاشی صرف سرکاری اداروں میں چل رہی ہے: چیف جسٹس

عیاشی صرف سرکاری اداروں میں چل رہی ہے: چیف جسٹس

چیف جسٹس انور ظہیر جمالی نے کہا ہے کہ عیاشی صرف سرکاری اداروں میں چل رہی ہے ، نجی اداروں میں تو بیکار ملازم کو ایک دن بھی برداشت نہیں کیا جاتا ۔سپریم کورٹ میں چیف جسٹس پاکستان انور ظہیر جمالی کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے پی ٹی سی ایل ملازم کی ترقی سے متعلق پشاور ہائی کورٹ کے حکم کے خلاف نظر ثانی درخواست کی سماعت کی۔ عدالت نے پشاور ہائی کورٹ کا فیصلہ کالعدم قرار دیتے ہوئے اپیل منظور کر لی ۔چیف جسٹس انور ظہیر جمالی نے ریمارکس دیئے کہ عیاشی صرف سرکاری اداروں میں چل رہی ہے، نجی اداروں میں تو بیکار ملازم کو ایک دن برداشت نہیں کیا جاتا ۔ ان کا کہنا تھا کہ ہمارا کلچر ہے کہ سچ نہیں بولنا ، وکلا مُکر نہ جائیں اس لئےعدالتی کارروائی کو ریکارڈ کیا جاتا ہے ۔عدالت عظمیٰ نے پشاور ہائیکورٹ کے فیصلے کیخلاف اپیل منظور کرتے ہوئے قرار دیا کہ کسی ملازم کو براہ راست ترقی نہیں دی جا سکتی ۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*