مستقبل میں بیڑیوں کو چارج کرنے کے لیے خون کا استعمال متوقع

مستقبل میں بیڑیوں کو چارج کرنے کے لیے خون کا استعمال متوقع

مستقبل میں جلد چارج ہوجانے والی اور دیر تک چارج رہنے والی بیٹریوں کی بہتر کارکردگی اور زیادہ صلاحیت کا انحصار خون میں پائے جانے والے ’’ہیم‘‘ پر بھی ہوگا۔ییل یونیورسٹی میں ماہرین کی ایک تحقیقی ٹیم نے دریافت کیا ہے کہ غیرمعمولی کارکردگی کی حامل، لیتھیم آکسیجن بیٹریوں کو بہتر اور قابلِ عمل بنانے میں عمل انگیز (کیٹالسٹ) کے طور پر ’’ہیم‘‘ سے زبردست مدد لی جاسکتی ہے جو خون کا لازمی حصہ بھی ہوتا ہے۔ موبائل، ٹیبلٹ اور لیپ ٹاپ میں آج کل جو بیٹریاں عام استعمال ہورہی ہیں انہیں ’’لیتھیم آئن بیٹریز‘‘ کہا جاتا ہے مگر اِن آلات میں بجلی کی ضرورت مسلسل بڑھتی جارہی ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ کھانے کے لیے گوشت حاصل کرنے کی غرض سے روزانہ لاکھوں کی تعداد میں جانور کاٹے جاتے ہیں اور ان سے نکلنے والے خون کی محفوظ تلفی ایک مسئلہ ہی رہتی ہے لیکن لیتھیم آکسیجن بیٹریوں میں ہیم کا استعمال اُن کی کارکردگی بڑھانے کے ساتھ ساتھ آلودگی کا باعث بننے والے اس خون کے بہتر استعمال کی راہ بھی ہموار کرے گا۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*