ایم کیو ایم کے ساتھ جو ہورہا ہے اس پر تشویش ہے، پرویز مشرف

ایم کیو ایم کے ساتھ جو ہورہا ہے اس پر تشویش ہے، پرویز مشرف

اسلام آباد: آل پاکستان مسلم لیگ کے سربراہ پرویز مشرف کا کہنا ہے کہ ایم کیو ایم کے ساتھ جو ہورہا ہے اس پر تشویش ہے لہٰذا ایم کیو ایم والے مہاجر اوراپنا نام چھوڑ کر نیا نام رکھیں۔اسلام آباد میں اپنی پارٹی کے اجلاس سے ٹیلی فونک خطاب میں پرویز مشرف نے کہا کہ پیپلز پارٹی پنجاب سے ختم ہے، کہاں ہیں یہ لوگ، پاکستان میں نئی سیاسی قوت بننی چاہیے، مسلم لیگ (ن) اور پیپلز پارٹی ملک میں تباہی مچارہے ہیں ان سے نجات ملنی چاہیے۔انہوں نے کہا کہ ایم کیو ایم کے ساتھ جو ہورہا ہے اس پر تشویش ہے، ایک صورت ہے فاروق ستار کی جگہ میں سربراہ بن جاؤں لیکن میں پاگل ہوں گا کہ اپنی حیثیت نیچی کرکے آدھی ایم کیوکیو کا سربراہ بن جاؤں۔

فاروق ستار نے سیاست سے دستبرداری کا فیصلہ واپس لے لیا۔

اے پی ایم ایل کے سربراہ کا کہنا تھا کہ ان کا اتحاد غیر فطری ہے اس لیے الگ ہوگئے، میرا وژن ہے کہ مہاجر قومیت اکٹھی ہوجائے ایک نام کے نیچے آجائے، ایم کیو ایم اور مہاجر بدنام ترین نام بن گئے ہیں، ایم کیو ایم والے مہاجراپنا نام چھوڑ کر نیا نام رکھیں، مہاجر نام چھوڑکر اپنے آپ کو پاکستانی کہیں۔اس موقع پر پرویزمشرف کی سربراہی میں پاکستان عوامی اتحاد کے نام سے نیا سیاسی اتحاد قائم کرنے کا بھی اعلان کیا گیا۔پرویز مشرف نے کہا کہ کراچی میں اتنی قومیں بستی ہیں جو پورے پاکستان میں نہیں، لوگ پاکستان عوامی اتحاد میں آجائیں، سب قومیتیں اکٹھی ہوجائیں، ایک نام ہوجائے اور ہمارے ساتھ اتحاد میں شامل ہوجائیں۔

سابق صدر نے کہا کہ مسلم لیگ کے علاوہ دھڑے اکٹھے ہو جائیں تو پاکستان کی فورس بن جائے گی، دیہی علاقوں میں فورس اکٹھی کریں تاکہ سندھ میں پیپلز پارٹی کو ہرا سکیں۔پرویز مشرف کا کہنا تھا کہ عدالت میں کیسز کا سامنا کرنے کو تیارہوں، معلوم تھا وزارت داخلہ سے مجھے سیکیورٹی کا جواب نہیں ملے گا۔

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*